August 14 Independence Pakistan 81

14 اگست یوم آزادیِ پاکستان August 14 Independence Pakistan

لسلام و علیکم
اس دفعہ پھر 14 اگست کوپاکستانی قوم جشن منائے گی۔ جبکہ

نہ جانے کتنے پاکستانی بھوکے سوئیں گے۔
کتنے بچے غربت کے مارے سڑکوں‌پر مزدوری کرتے دھوپ میں جلیں گے
کتنے بچے اس دن بھی تعلیم سے ایک دن اور محروم رہیں‌گے۔
کتنی مائیں اور بہنیں بیویاں، بچے، ‌اپنے گمشدہ بیٹوں، بھائیوں، خاوندوں اور باپوں کی تلاش میں روئیں گے۔
کتنے لوگ امریکہ کے پیسوں کی خاطر شروع کی گئی نام نہاد “دھشت گردی کے خلاف جنگ” کی بھینٹ چڑھیں‌گے
کتنے بچے یتیم ہونگے، کتنی مائیں اپنے بیٹوں‌کو کھوئیں گی، کتنی بہنیں بھائیوں سے محروم اور کتنی بیوئیاں بیوہ ہونگی۔
اور۔۔۔
اور۔۔۔۔
اور۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آپ مجھے بتائیں، آپ ان حالات میں‌جشن منائیں گے؟ کیسے؟ مجھے بھی سمجھائیں کہ میں‌کیسے مناؤں؟

~*~-*-~-*-~-*-~*~-*-~-*-~-*-~*~-*-~-*-~-*-~*~-*-~-*-~-*-~*~-*-~-*-~-*-
وہ سمجھ رہا تھا کہ موت اُسکے پیچھے ہے
حالانکہ وہ اُسکے سامنے تھی
~*~-*-~-*-~-*-~*~-*-~-*-~-*-~*~-*-~-*-~-*-~*~-*-~-*-~-*-~*~-*-~-*-~-*-

ان گنت صدیوں میں‌تارک بہیمان طلسم
ریشم و اطلس و کمخواب میں‌بنوائے ہوئے
جا بجا بکتے ہوئے کوچہ و بازار میں‌جسم
خاک میں لتھڑے ہوئے، خون میں‌نہلائے ہوئے

لوٹ جاتی ہے ادھر کو ہی نظر کیا کیجئے
اب بھی دلکش ہے ترا حسن مگر کیا کیجئے

اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا
راحتیں اور بھی ہیں‌وصل کی راحت کے سوال​


دل دکھا ہے لیکن ٹوٹا تو نہیں ہے 
امیید کا دامن چھوٹا تو نہیں ہے

سنبھلنے دے مجھے اے نا امیدی کیا قیامت ہے 
کہ دامان خیال یار چھوٹا جائے ہے مجھ سے


اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں