Screenshot 63

اردو مزاحیہ شاعری Funny Poetry Urdu

funny poetry

ہم نے روشن دان سے اڈیاں چُک چُک کر
اُس کے گھر میں چاتی ماری لُک لُک کر

عشق کا ساڑا بہت ہی بَھیڑا ہوتا ہے
تِیلا ہو جاتا ہے عاشق سُک سُک کر

دمے کا مارا عاشق سیڑھیاں جو چڑھیا تھا
ہر پوڑھی پر ساہ وہ لیتا تھا رُک رُک کر

لالُو کھیت سے ایک پروھنا آیا تھا
منجھے پِیڑھے بھر گیا پان سے تُھک تُھک کر


بھینس رکھنے کا تکلف ہم سے ہوسکتا نہیں
ہم نے سُوکھے دودھ کا ڈبا جو ہے رکھا ہوا
گھر میں رکھیں غیر محرم کو ملازم کس لئے
کام کرنے کے لئے اَبا جو ہے رکھا ہوا


اپنی زوجہ کے تعارف میں کہا اک شخص نے
دل سے ان کا معترف ہوں زبانی ہی نہیں
چائے بھی اچھی بناتی ہیں میری بیگم مگر
منھ بنانے میں تو ان کا کوئی ثانی نہیں


داخلہ اُس نے کالج میں کیا لے لیا
لڑکیوں میں بڑا معتبر ہو گیا
کھڑکیوں سے نظر اُس کی ہٹتی نہیں
میرا بیٹا تو بالغ نظر ہو گیا


منہ کو میٹ کے بیٹھا بہت ہی سوبر لگتا تھا
اک دن اس نے منہ جو کھولا اندر بِیڑا تھا
وہ کہتا تھا داڑھ کا درد بھی دل سے اٹھتا ہے 
ڈاکٹر نے جب داڑھ نکالی اندر کِیڑا تھا


ایک ہی زوجہ کافی ہے
باقی پھراللہ معافی ہے

چڑھےآپ ہی سولی پہ
عقل کے یہ منافی ہے
ہے کونین سے کڑوی
آغازمیں میٹھی ٹافی ہے
دیتی ہے وہ جوشاندہ
کہتی اسکو کافی ہے

فوراً مانےمیری بات
طبیعت کے منافی ہے

نہیں پسند میٹھی بات
شوگر یہ اضافی ہے

لاکھ خون کھو لائے
عارف پی لے صافی ہے





eom6a


اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں