urdupaper 73

پتا ہے اس کا آخری جملہ کیا تھا..؟ poetry quotes in urdu

صرف اِک ترکِ تعلق کے لیے۔ !!
تُو نے ڈھونڈے ہیں بہانے کیا کیا


حالِ دل کیوں ہے ویراں 
کوئی جانے وجہ ہم سے بھی


ﺍﺗﻨﯽ ﻣﺤﻨﺖ ﺳﮯ ﺑﮕﺎﮌﺍ ﮬﮯ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ 

ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﻮ ﺳﯿﺪﮬﺎ ﮐﯿﺠﺌﮯ


‏کوئی تو کہے …….گلا دبا دوں گى 

کوئی تو کرے اتنی محبت مجھ سے😍


ہِجر کی رُت عذاب ہے محسن
عادتیں سب بدل گئیں اُس کی


بارشوں کا موسم ہے، روح کی فضاوں میں 
غم زدہ ہواٸیں ہے، بے سبب اُداسی ہے۔۔


آپ نے مجھ کو ڈبویا ہے کسی اور جگہ
اتنی گہرائی کہاں ہوتی ہے دریاوں میں !


‏ہجر انساں کے خد و خال بدل دیتا ہے

کبھی فرصت میں مجھے دیکھنے آنا


‏ﺭﮐﮭﺘﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺧﯿﺎﻝ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﺎ ﺗﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ

ﮨﻢ ﺑﮯ ﺧﯿﺎﻝ ﻟﻮﮒ ﮨﯿﮟ , ﮐﭽﮫ ﺗﻮ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﺮ


مجھے یاد رکھ کر_____گناہ نہ کر ! 

مجھے بھول جا،__ یہ ثواب ھے !

ایک فتوی ہمارے فرقہ پر……
ہم محبت کو دین کہتے ہیں


میں نے آنکھوں میں جھانکنا چاہا❤
أس نے دل میں أتار دی آنکھیں❤


تمھارے هاتھ کی دستک کی آس میں محسنؔ
میں اپنے گھر سے کہیں بھی نہیں گیا برسوں


“فَقیرِ عِشق ہُو ں , اِک دَر سے لَگا بیٹھا ہُوں

بِھکاری ہوتا تو , دَر دَر پے پَڑا مِلتا میں”


تمہارے پیروں میں درد نہیں ہوتا کیا
سارا دن میرے خیالوں میں گھومتے رہتے ہو۔۔۔ 👣


کبھی بےوجہ اُلجھن، کبھی بےوجہ اُداسی
ایک شخص نے مجھ کو مجھ سے ہی بیزار کر دیا…. ❤


کبھی بےوجہ اُلجھن، کبھی بےوجہ اُداسی
ایک شخص نے مجھ کو مجھ سے ہی بیزار کر دیا…. ❤


یا تو میرے مزاج میں رچ بس گئے غم،
یا دل کو احتجاج کی عادت نہیں رہی اب….


تمہارے لئے مٹ __’جانے کا ارادہ تھا
تم خود ہی مٹا دو گی یہ سوچا نہ تھا..!!


وہ جـو___________مـرنے پہ تُلا ہـے 
اُس نـے جـی کـر بھـی تـو دیکـھا ہـو گا


اے صاحبِ عِشق اک فتویٰ تو دو 

رخّ یار پہ مر جانا خود کشی ہے یا شہادت.

زندہ رہیں تو کیا ہے جو مرجائیں ہم تو کیا
دنیا سے خاموشی سے گزر جائیں ہم تو کیا


جسے خرید کر آزاد کر دیا جائے
وہ بد حواس پرندہ پلٹ کے کیا دیکھے


پھر یوں ہوا کہ کٹ گئی تیرے بغیر بھی

اُجڑی ہوئی ، لُٹی ہوئی ، ویران زندگی !!

تیـــری جـــدائی نے ۔۔۔۔۔۔۔۔ فرشتـــــوں سا کر دیا مجھے
میـــرا عشـــق اب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ولیــــوں سا صبـــر رکھتا ہے


قید کرتا ہُوں، حسّرتیں دِل میں
پھر اُنہیں، خُودکُشی سِکھاتا ہُوں


َہَوا میں زہر گُھلا، پانیوں میں آگ لگی

تمہارے بعد —— زمانہ بڑا عجیب آیا


مِلے تو مِل لیے ، بِچھڑے تو یاد بھی نہ رھی
تعلقات میں ایسی …….. رَوا رَوی بھی نہ ھو

ﺳﺐ ﺣﺎﺩﺛﺎﺕ ﻣﻞ ﮐﮯ ﻣﯿﺮﺍ کچھ ﻧﮧ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ
ﺍﮎ ﺗﯿﺮﺍ ﺍﺟﺘﻨﺎﺏ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻣﯿﺮﯼ ﺟﺎﻥ ﻟﮯ ﮔﯿﺎ


میں نے ایک عرصے سے تجھے ورد میں رکھا 
میرے ہونٹوں پہ تیرے نام کے چھالے ہیں


ﮬﻢ ﺳﮯ ﻧﻔﺮﺕ ﻭﺍﺟﺐ ﮨﮯ ﺻﺎﺣﺐ
ﻧﮧ ﮐﺮﻭ ﮔﮯ ﺗﻮ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ


پتا ہے اس کا آخری جملہ کیا تھا..؟
“مجھ سے پوچھ کر کی تھی محبت”

 
 
 

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں