Sad life 164

اداس زندگی Sad life

اب جو ہچکیاں آئیں تو پانی پی لینا
‏یہ وہم چھوڑ دے کہ ہم تجھے یاد کرتے ہیں


قسم لے لو دل اک پل بهی غافل نہیں تیری یاد سے.

یہ اور بات ہے کہ ہم سر عام پکارا نہیں کرتے


مجھے زندگی کا اتنا تجربہ تو نہیں

سنا ہے سادگی میں لوگ جینے نہیں دیتے,,,,,😊


تیری صورت کو جب سے دیکھا ھے

میری آنکھوں پے… لوگ مرتے ھیں



جــو کھــوگیا ہــــے کـــــہیں……..

زنــــــــــــــــــدگی کـے میلــے مـــــــیں…..

کبھی کبھی اســــے………

آنــــــــــــــــــــــــــسو نکـــل کے دیکھتے ہیں …….!!


شام ھوتے ہی تیرے ہجر کا دکھ
دل میں خیمہ لگا کے بیٹھ گیا


تمنا اگر درد دل کی ہو تو کر خدمت فقیروں کی ۔

نہیں ملتا یہ گوہر بادشاہوں کے خزینوں میں ۔


ﺍﺭﮮ ﮨﻢ ﺗﻮ ﭼﺎﮬﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ____

ﻟﻮﮒ ﮨﻢ ﺳﮯ ﻧﻔﺮﺕ ﮐﺮﯾﮟ

ﻣﺤﺒّــــﺖ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﻥ ﺳﯽ ____ ﻟﻮﮒ

ﺳــــﭽﯽ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿــﮟ


‏اے میری موت میری جان بچا لے آ کر

زندگی روز مجھے زیرو زبر کرتی ھے-


🌹🍃🌹💞💞💞💞💞🌹🍃🌹
مجبوریوں کے نام پہ دامنِ چھڑا گئے…

وہ لوگ جن کے عشق میں دعوےوفا کے تھے . . . \

🌹🍃🌹💞💞💞💞💞🌹🍃🌹


🌹🍃🌹💞💞💞💞💞🌹🍃🌹
کیسے ممکن ھے__بھول جائیں تمہیں “صاحب”…

قصہ زندگی نہیں __ حصہ زندگی ہو تم . . . \
🌹🍃🌹💞💞💞💞💞🌹🍃🌹


میں شبِ وصل زباں چوس کے چھوڑوں کیوں کر
کر سکے غیر سے کیوں وعدہ پیماں کوئی


ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﯾﺎﺩﯾﮟ
ﻭﺭﻧﮧ
ﺷﺎﻋﺮﯼ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﺏ ﻣﺠﮭﮯ ﺧﻮﺩ ﺍﭼﮭﺎ ﻧﮭﯽ ﻟﮕﺘﺎ !!.


یوں نقش ہوا آنکھ کی پتلی میں وہ چہرہ

پھر ہم نے کسی اور کی صورت نہیں دیکھی



‏داســـــــتان وفـــــــا بس اتنی سی ہے ۔۔۔

اس کی خاطـــــــر اسی کو چھـــــــوڑ دیا ۔۔۔


آ گیا جس روز اپنے دل کو سمجھانا مجھے

آپ کی یہ بے رخی کس کام کی رہ جائے گی


‫آسانیوں سے پوچھ نہ منزل کا راستہ
اپنے سفر میں راہ کے پتھر تلاش کر

ذرے سے کائنات کی تفسیر پوچھ لے
قطرے کی وسعتوں میں سمندر تلاش کر


میں ۔۔۔۔۔ شامِ غریباں کی اُداسی کا مسافر
صحراؤں میں جیسے کوئی جگنو تیری آواز


” ہے یک طرفہ تماشہ طبیعتِ عشاق!
کبھی فراق میں باتیں کبھی وصال میں چپ…..


سنا تھا ٹوٹ کے جڑنا بہت مضبوط کرتا ہے…
سو ریزہ ریزہ کر بیٹھا اسی امید پر خود کو!!!!♡


خوب گزرے گی جب مل بیٹھیں گے ___ ہم دونوں
“قاتلانہ ادائیں تیری ____عاشقانہ مزاج میرا


مجھے سانس لینا بڑا دشوار سا لگتا ہے

جب تیری یادوں کا دھواں رواں چلتا ہے


‏زبان کڑوی ہی سہی__مگر دل صاف رکھتا ہوں

کب کون کیسے بدل گیا__سب حساب رکھتا ہوں,


ﻗﻄﺮﮦ ﻗﻄﺮﮦ ﻣﯿﺮﮮ ﺣﻠﻖ ﮐﻮ __ ﺗﺮ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ__!!
ﻣﯿﺮﯼ ﺭﮒ ﺭﮒ ﻣﯿﮟ ﺍُﺳﮑﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﺳﻔﺮ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ__!!


دیوانہ ہوں میں مجھ سے بڑی دیوانی ہے وہ
خوب گزرے گی جب مل بیٹھیں گے دیوانے دو


ہماری آوارگی میں کچھ دخل تمھارا بھی ہے

جب یاد تمھاری آتی ھے تو گھر بھی اچھا نھیں لگتا


میزانِ عشق میں بار بار تولا
مسکانِ یار طبِ لقمان سے بہتر نکلی



ہر شخص کو نہیں ملتی منہ مانگی مرادیں سرکار!!

ہر شخص کا مقدر سکندر نہیں ہوتا…


نہ بزم اپنی , نہ ساقی اپنا , نہ شیشہ اپنا ,
نہ جام اپنا ۔۔۔

اگر یہی ہے نِظام ہستی تو غالب , زندگی کو سلام اپنا


کل رات میں نے اپنے دِل سے تیرا رشتہ پوچھا___!!
کمبخت کہتا ھے جتنا میں اُس کا ہوں اُتنا تیرا بھی نہیں


دھوپ کا تو بس نام ہی بدنام ہے

جلتے تو لوگ ایک دوسرے سے ہیں💗💖💝💞💕


آ گیا جس روز اپنے دل کو سمجھانا مجھے

آپ کی یہ بے رخی کس کام کی رہ جائے گی


‫آسانیوں سے پوچھ نہ منزل کا راستہ
اپنے سفر میں راہ کے پتھر تلاش کر

ذرے سے کائنات کی تفسیر پوچھ لے
قطرے کی وسعتوں میں سمندر تلاش کر


میں ۔۔۔۔۔ شامِ غریباں کی اُداسی کا مسافر
صحراؤں میں جیسے کوئی جگنو تیری آواز


دیکھ تو دل کہ جاں سے اٹھتا ہے
یہ دھواں سا کہاں سے اٹھتا ہے

گور کس دل جلے کی ہے یہ فلک
شعلہ اک صبح یاں سے اٹھتا ہے

خانۂ دل سے زینہار نہ جا
کوئی ایسے مکاں سے اٹھتا ہے

نالہ سر کھینچتا ہے جب میرا
شور اک آسماں سے اٹھتا ہے

لڑتی ہے اس کی چشم شوخ جہاں
ایک آشوب واں سے اٹھتا ہے

سدھ لے گھر کی بھی شعلۂ آواز
دود کچھ آشیاں سے اٹھتا ہے

بیٹھنے کون دے ہے پھر اس کو
جو ترے آستاں سے اٹھتا ہے

یوں اٹھے آہ اس گلی سے ہم
جیسے کوئی جہاں سے اٹھتا ہے

عشق اک میرؔ بھاری پتھر ہے
کب یہ تجھ ناتواں سے اٹھتا ہے


ابھی سے شاعری کرنے لگے ہو
ابھی تو زخم بھی کھائے نہیں ہیں
ابھی تو بے تحاشا بولتے ہو
ابھی تو لب پہ تالے بھی نہیں ہیں
لکھے ہی کب ہیں تم نے خط کسی کو
کسی کے خط سنبھالے بھی نہیں ہیں
ابھی لوگوں میں اٹھتے بیٹھتے ہو
ابھی تو دکھ سے یاری بھی نہیں ہے
نا آنکھوں میں اداسی ہے نا ان میں
کسی کی انتظاری بھی نہیں ہے
ابھی تو بس ڈھنڈورا پیٹتے ہو
اداسی کھا گئی تن من تمہارا
غموں نے کھا لیا جوبن تمہارا
مرے شاعر تمہیں معلوم کب ہے
کہ زخمِ نارسائی کیا بلا ہے
پریتم کی جدائی کیا بلا ہے
ابھی تو شوخ گیتوں کی دھنوں پر
تم اپنے سر کو دُھنتے جا رہے ہو
جہاں سے لفظ ملتے جا رہے ہیں
انہیں لکھنے کو چُنتے جا رہے ہو
جہاں کی محفلوں میں بیٹھ کر بھی
فقط اک نام کی تنہائیوں کو
ابھی شعروں میں بُنتے جا رہے ہو
خرد کا ساز بجتا جا رہا ہے
خرد کے گیت سنتے جا رہے ہو
ابھی تو یار سے نکھڑے نہیں ہو
خود اپنے آپ سے بچھڑے نہیں ہو
تو کیوں وہ زخم لکھتے جا رہے ہو
سبھی وہ زخم جو کھائے نہیں ہیں
تو کیوں وہ غم سناتے جا رہے ہو
سبھی وہ غم کہ جو پائے نہیں ہیں
ابھی تو وصل کو سمجھے نہیں ہو
ابھی تو ہجر کے سائے نہیں ہیں
انہیں لفظوں میں کیسے لا رہے ہو؟
رہینِ عشق ہیں جو حرف۔۔۔ پیارے!
ابھی جو درد میں اترے نہیں ہیں
ابھی جو روح میں آئے نہیں ہیں۔۔۔۔


Kuch khas dilon ko ishq ke alham hoty H

<,”Ay-SaNaM,”>

Mohabbat muajza H muajzay kub aam hotay H


Is Dard Ki Dunia Se Guzar Q Ni Jate
Ye Log B Kya Log H Mar Q Ni Jate

H Kon Zamany Me Mera Puchne Wala
Nadan H Jo Kehte H K Ghar Q Ni Jate

Sholay H To Q InKo Bharkte Ni Dekha
H Khak To Rahon Me Bikhr Q Nai Jate

Anso B H Ankhon Me Duain B H Lub Pr
Bigry Hue Halat Sanwar Q Ni Jate,



Tu mujhay ishq ke usool na samjha saka mumkin H

<,”Ay-SaNaM,”>

Ke hum sa deewana tumhy phr kahin na mily,


Ik meri hi yaad se perhaiz H tumko

<,”Ay-SaNaM,”>

Na janey kis hakeem se dawa letay ho


Kitna Ghafil H Mujhe Acha Samjhne Wala

Kya Basaye Ga Mujhe Khud Hi Ujarne Wala

Kya Tamasha H K Me Us Pe Bigar Betha Ho

Wo Jo Mash-Hoor H Logon Me Bigarne Wala

Zinda Rehne Ka Sabab Kya H Ye Dil Se Puch

Juzz Tere Or Nahi Koi Dharakne Wala

Nao Doobi Meri Karte Hue Deedar Tera

Or Tera Naam Hi Leta Tha Ubharne Wala

Teri Waja Se Hi Larta Ho Zamany Bhar Se

Me Ho Mash-Hoor Zamany Me Jhagarne Wala

Kesi Ankhein H Wo Zalim Ki Samandar Jesi

Kitna Roshan Tera Chehra H Chamakne Wala

Tumhe Maloom H Kon Likhe Ga Ye Ghazal

Tumhare Ishq Me Bar-Waqt Tarapne Wala


Hazar Mosam Badal Chuky H

Mgr H Dil Me Khizan Ka Mosam

Bichar K Tum Se Kahan Hun Zinda

Guzar Raha H Saza Ka Mosam

Mohabaton Me Kahan H Chahat

Kahan Raha Ab Qaza Ka Mosam

Khalish Rahi Ye K Tum Manaty

Pr Aa Chuka Ab Naza Ka Mosam

Wohi Mile Ga Jo Boya Tum Ne

Jo Aya Ek Din Jaza Ka Mosam

<,”Ay-SaNaM,”>

Me Us Ko Bhulaun Kese

Wohi H Dil Ki Raza Ka Mosam,,,


Rafta Rafta Bujh Gaya Chiragh-e-Arzoo,

<,”Ay-SaNaM,”>

Pehly Dil,
Phr Duniya,
Phr Zindagi,
Aur
Aab Dost,
Bhi Khamosh Rehne Lage H,


Ashk-e-khon Baha kar Manga Tha aj Raat Usay

<,”Ay-SaNaM,”>

Mgr Afsos
Frishtoun Ne Kaha
Shart-e-Qaboliat H k Dua Dono Taraf Sy hoo.


Sari duniya k routh jany sy muje koi garz nai

<,”Ay-SaNaM,”>

Tera bat na krna muje takleef deta H


Ishq ki nagari me maafi nai kisi ko B

<,”Ay-SaNaM,”>

ishq umar nai dekhta bas ojar deta H


Suna H ishq sy ap ki khub banti H

<,”Ay-SaNaM,”>

Ek ehsan kro gy ishq sy mera kasoor to pochna


مزید

محبت کی شاعری

دو لائن شعر محبت 

دوست بیوفا شاعری اردو 

دو لائن شاعری

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں